ناشتہ

لفظ اس کے
خیال اس کا
ردیف اس کی
قافیہ اس کا
باندھا جو مضمون
وہ بھی اس کا
مگر ۔۔۔۔۔۔۔
ناشتہ جو بنا ہے تازہ تازہ
وہ میرا
-
-
سمجھا کرو یار!
بہت بھوک لگی ہوئی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

You may use these HTML tags and attributes: <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <strike> <strong>